دہلی عرس کمیٹی کی طرف سے سید محمد اشرف کو مومینٹو پیش کیا گیا

10مارچ؍ نئی دہلی (پریس ریلیز)
دہلی کے براری میں عرس خواجہ غریب نواز میں حاضری دینے ملک بھر سے جانے والے زائرین کے لئے دہلی سرکار کی طرف سے عرس ٹرانزٹ کیمپ لگایا یا گیا ہے جو 1مارچ سے 20مارچ تک زائرین کی خدمت کے فرائض انجام دے گا۔ کل رات آل انڈیا علما ء ومشائخ بورڈ کے ذمہ دار مولانا مختار اشرف صاحب،اسکالر جامعہ ملیہ اسلامیہ نے عرس کیمپ میں چل رہی محفل میں خصوصی خطاب کیا۔آل انڈیا علماء ومشائخ بورڈ کی جانب سے دہلی سرکار اور دہلی عرس کمیٹی کے چیئر مین جناب ذاکر حسین خاں صاحب کو مبارکباد پیش کی کہ جس طرح کے انتظامات کئے گئے ہیں وہ واقعی قابل تعریف ہیں۔ آپ نے زائرین کو تعلیمات خواجہ غریب نوازسے روشناس کرایااور کہا کہ آپ کا قول ’’محبت سب سے نفرت کسی سے نہیں ‘‘جیسی تعلیمات کی وجہ سے ہی آج 807برسوں کے بعد بھی لوگوں کے دلوں میں خواجہ معین الدین چشتی رحمۃ اللہ علیہ کی محبتیں زندہ ہیں اورآل انڈیا علماء ومشائخ بورڈ خواجہ غریب نواز کے اسی پیغام محبت کو عام کررہا ہے ۔
دہلی عرس کمیٹی کے چیئر مین جناب ذاکر حسین خاں صاحب نے آل انڈیا علماء ومشائخ بورڈ کے ذمہ دار مولانا مختار اشرف صاحب کو بورڈ کے بانی وقومی صدر حضرت سید محمد اشرف کچھوچھوی کے نام ملک میں ان کی خدمات کے اعتراف میں مومینٹو پیش کیا ۔ بورڈ کے کارکنان حسین شیرانی اور حافظ قمرالدین نے کیمپ کا جائزہ لیتے ہوئے زائرین سے ان کی شکایات معلوم کیں تو زائرین ہر طرح سے مطمئن اور خوش نظر آئے،زائرین نے کہا کہ ہمیں کسی بھی طرح کی کوئی پریشانی نہیں ۔حسین شیرانی نے کہا کہ مستقبل میں بھی دہلی سرکار اور دہلی عرس کمیٹی سے اسی طرح کے اطمینان بخش انتظامات کی امید کرتے ہیں۔

آل انڈیا علماء ومشائخ بورڈ کا پلوامہ خودکش حملہ کے خلاف احتجاجی مظاہرہ جاری

28 February, Moradabad

جموں کشمیر کے پلوامہ میں سینٹرل ریزرو پولیس فورس کے قافلے پر دہشت گردانہ حملے کے خلاف احتجاجی مظاہرہ میں خطاب کرتے ہوئے آل انڈیا علماء مشائخ بورڈ مرادآباد یونٹ کے صدرقاری عامر رضا اشرفی صاحب نے کہا کہ اس بزدلانہ و وحشیانہ حرکت کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے۔ہم ہندوستانی مسلمان اس دہشت گردانہ حملہ کے خلاف شدید بیزاری اورنفرت کااظہار کرتے ہیں اورشہید جوانوں کے اہل خانہ کے غم میں برابر کے شریک ہیں اورزخمی جوانوں کی صحت یابی کے لئے دعا کرتے ہیں ۔
بورڈ کے ذمہ دار مولانا مختار اشرف صاحب نے کہاکہ ۱۴؍فروری کو پلوامہ میں جو حملہ ہوا اس قدر خوفناک اور انسانیت سوز تھاکہ اس کی مثال نہیں ملتی ۔اس سانحہ کے بعد پورے ملک میں غم وغصہ کی لہر ہے، انہوں نے حکومت سے دہشت گردی کونیست ونابود کرنے کے لئے ٹھوس کاروائی کئے جانے کا مطالبہ کیا۔
مولانا راحل اشرفی صاحب نے اس دہشت گردانہ حملے کی مذمت کرتے ہوئے قصورواروں کے خلاف سخت کارروائی کا مطالبہ کیا ۔حافظ فاروق صاحب کہا کہ مذہب اسلام ہر قسم کے تشدد اور ظلم و ستم کے ہمیشہ خلاف رہا ہے اورحکومت ہندسے مطالبہ ہے کہ اس مسئلہ کا کوئی مستقل حل تلاش کیا جائے۔
حافظ نظر الحسن اشرفی صاحب نے کہا کہ ملک دشمن عناصر کی جانب سے جو دہشت گردانہ حملہ کیا گیاوہ بزدلانہ حرکت ہے ملک کا ہر شہری اس طرح کے دہشت گردوں کے حملے کی مذمت کرتا ہے اور بزدلانہ اور جاہلانہ قرار دیتا ہے۔
قاری محمد عارف صاحب نے کہا کہ دہشت گردی کو جن جن ممالک کا تحفظ حاصل ہے ان سے بین الاقوامی برادری کو چاہیے کہ ناطہ توڑ لے اور کہا کہ کشمیر میں شہید ہوئے جوانوں کے ساتھ پورا ملک کھڑا ہے۔
جلوس کے آخر میں سی آر پی ایف کے جوانوں کی شہادت پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے ان کو خراج عقیدت پیش کی گئی ۔
الجامعۃ الصابرہ للبنات میں بھی مظاہرہ کیا گیا جس میں کثیر تعداد میں طالبات نے حصہ لیااور حادثہ میں جاں بحق ہونے والے تمام فوجی جوانوں کے اہل خانہ سے ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے زخمیوں کے لئے صحت یابی کی دعا کی گئی۔

آل انڈیا علماء ومشائخ بورڈ کے صوبائی دفتر،لکھنؤ میں اہم میٹنگ منعقد

لکھنؤ۔5نومبر پریس رلیز

آل انڈیا علماء ومشائخ بورڈ کے صوبائی دفتر لکھنؤ میں سید حماداشرف کچھوچھوی (جنرل سکریٹری یوپی) کی صدارت میں ایک اہم میٹنگ منعقد ہوئی جس میں میرٹھ،رائے بریلی،سلطانپور،امیٹھی،بریلی ،سدھارتھ نگر سمیت یوپی کے مختلف اضلاع کے ذمہ داروں نے شرکت کی۔میٹنگ کاآغاز تلاوت قرآن کریم سے ہوا۔جمال اشرف اورتوفیق رضانے نعت ومنقبت کے نذرانے پیش کئے۔
میٹنگ کوخطاب کرتے ہوئے ہوئے مولانا اشتیاق احمدنے کہاکہ صوفیائے کرام نے ہمیشہ بلاتفریق مذہب وملت خدمت خلق اورآپسی بھائی چارہ کا درس دیاہے۔صوفیائے کرام کی انہی تعلیمات کوعام کرنا اورسنی صوفی مسلمانوں میں حب وطن اورآپسی بھائی چارہ کے جذبے کوبیدارکرنااوران کے حقوق کی حصولیابی کے لئے جدوجہد کرنا ہی بورڈ کانصب العین رہاہے۔
مولانا قیصر رضاعلوی نے دور حاضر کے اہم مسائل پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ بورڈ نے ہمیشہ ملک اور سماج کے ترقی کی بات کر کے وطن سے محبت کی انوکھی مثال قائم کی ہے۔آج جبکہ قوم مسلم غیر ضروری مسائل میں الجھ کر اپنی ترقی پر توجہ مرکوز نہیں کر پارہی ہے ایسی حالت میں ضروری تھا کہ بورڈ صوفیائے کرام کی تعلیمات کے مطابق ان کی اصلاح کے لئے لائحہ عمل طے کرے اور معاشرے میں اخلاقی اور تعلیمی بیداری کی مہم بھی شروع کر ے۔
مولانامقبول احمدسالک مصباحی نے کہا کہ بورڈ کے بانی وصدر نے یہ عندیہ ظاہر کیا ہے کہ بورڈقوم مسلم کے موجودہ مسائل پرایک عظیم الشان سیمینار منعقدکریگا جس میں ملک بھر سے سجادگان،علماء کرام و دانشوران اپنے مقالات پیش کریں گے اور اظہار خیال کریں گے، جوکہ لائق تحسین ہے۔انہوں نے لوگوں سے بورڈ کے ساتھ کھڑے ہونے کی تلقین کی جس سے اہل سنت و جماعت کو تقویت مل سکے۔مولانا کی اس بات سے شرکاء نے اتفاق کیا اوراپنے پورے تعاون کی یقین دہانی کرائی۔
حافظ مبین احمدنے بورڈ کومضبوط کرنے کے لئے یوپی کے تقریباًسبھی اضلاع میں یونٹوں کے قیام اورممبرسازی پرزوردیا ۔
میٹنگ کوحضرت سید احمدشطاری،مولانا انواراحمدشیری،حافظ مبین احمد نے بھی خطاب کیا۔میٹنگ کے آخر میں آل رسول احمدآفس انچارج لکھنؤ نے شرکاء کاشکریہ اداکیا۔
میٹنگ کااختتام صلوٰۃ وسلام اور قاری محمداحمدبقائی صاحب کی ملک وملت کی خوشحالی کی دعاپرہوا۔میٹنگ میں مولان منعم رضا،اما م گل حسن،سید احسان علی،اعجاز خان،رمضان علی،اسعداشرفی،نگارعالم،محمدشبیرخان،متین احمد،محمداحسان اللہ کے علاوہ کثیرتعداد میں لوگ موجودرہے۔