AIUMB condemns shooting at synagogue in Poway, California

New Delhi, 29 April 2019

All India Ulama & Mashaikh Board releases the following statement condemning the Saturday shooting at the Congregation Chabad in Poway, California:

“There is no worse form of terrorist extremism than an attack on a place of worship — whether it be arson at churches in Louisiana, mass shootings at mosques in Christchurch, New Zealand, the attacks on Churches in Sri Lanka or this weekend’s attack on a synagogue in Poway, California. This evil must be confronted by all of us, especially faith leaders who at times have to overcome threats from within their own community to speak up against extremism. We cannot be bystanders in this war against the right of any community to worship in peace. Enough is enough”

AIUMB strongly condemned the acts of terror in Sri Lanka

New Delhi,  April 23.

The All India Ulama & Mashaikh Board (AIUMB) strongly condemned the acts of terror triggered by multiple bomb blasts on the Easter morning on worshipers in churches and many guests at hotels in Sri Lanka that destroyed mercilessly more than 300 innocent lives and critically injured more than 500 people.

AIUMB offered condolences to all bereaved families and shared the grief and pain as fellow human beings.

AIUMB, in no uncertain terms, stated that acts of terror and violence against fellow human beings is a brutal assault on the dignity of humanity or Karamat-e-Insani, which is the most important objective of the Sharia in Islam.

AIUMB founder and President Hazrat Syed Mohammad Ashraf  said that acts of terror such as this leave deep wounds as they destroy innocent lives and families.

“As we condemn terror and violence resolutely with courage we resolve to work towards Reconciliation and Peace that are foundational principles of Sufism in Islam. We join in spirit with all people of good will and seekers of peace”, he added.

سائنس نے بھی کیا معراج النبی ﷺ کا اعتراف

نئی دہلی، 4مارچ، پریس ریلیز
درگاہ بھورے شاہ رحمۃ اللہ علیہ، نزد نظام الدین ریلوے اسٹیشن ،نئی دہلی میں کل رات جشن معراج النبی ﷺ اور خواجہ غریب کانفرنس کا انعقاد ہوا جس میں آل انڈیا علماء و مشائخ بورڈ کے صدرا ورلڈ صوفی فورم کے چیئر مین حضرت سید محمد اشرف کچھوچھوی نے بطور مہمان خصوصی شرکت کی۔ حضرت نے کہا کہ واقعہ معراج کی حقیقت کو دور جدید کی سائنسی ایجادات نے ثابت کر دیا ہے۔ انسان سات سمندرپار کسی دیہات میں بیٹھا ویڈیو لنک سے تصویر اور آواز کے ساتھ بات کر سکتا ہے، ایک ہی وقت میں ہندوستان میں بھی ہے اور امریکہ میں بھی موجود ہے، بذریعہ کمپیوٹر براہ راست مشاہدہ ہورہاہے، معجزات ، مشاہدات و کشف وکرامات جیسے روحانی معاملات کے منکرین کی عقلی دلیلوں کو سائنس نے مسترد کر دیا ہے۔حضرت نے معترضین کا سوال کہ اتنی طویل و عظیم مسافت ایک رات میں کیسے طے ہو سکتی ہے تو ان کو برقی رو کی تیز رفتاری سے مثال دیتے ہوئے کہا کہ جب بجلی کا ایک بلب ایک لاکھ چھیاسی ہزار میل کے فاصلے پر سوئچ دبانے سے ایک سیکنڈ میں جل جاسکتا ہے تو رسول اللہ ﷺ معراج کیوں نہیں کر سکتے۔ آپ نے کہا کہ ذہن کو صاف کرنے اور غور کرنے کی ضرورت ہے۔
حضرت نے خواجہ غریب نواز کی تعلیمات پربھی روشنی ڈالی، آپ نے کہا کہ ہمیں اس نفرت کے دور میں خواجہ معین الدین چشتی رحمۃ اللہ علیہ کی پیروی کرنی ہوگی ،تبھی ہم کامیاب ہوسکتے ہیں۔ حضرت نے مسجد اور درگاہ بھورے شاہ کمیٹی کے نوجوانوں کو دعاؤں سے نوازتے ہوئے کہا کہ جب تک نوجوانوں کے دلوں میں محبت رسول و محبت اولیا ہے تب تک ہماری قوم کو کوئی گمراہ نہیں کرسکتا۔
پروگرام کی صدارت حضرت سید شاہ بختیار حسن صاحب صابری فریدی چشتی، سجادہ نشین خانقاہ چشتیہ فریدیہ صابریہ قادریہ عالیہ دھموارہ شریف نے کی۔پروگرام کا اختتام صلوٰ ۃ وسلام اور ملک میں امن وامان کی دعا کے ساتھ ہوا۔